Follow Us

آج کا دن کیسا رہے گا

تازہ ترین خبریں

خیبرپختونخوا میں سیلابی ریلوں نے تباہی مچادی، 24 افراد جاں بحق

 پشاور: ڈیرہ اسماعیل خان اور سوات سمیت خیبرپختون خوا کے کئی علاقوں میں سیلابی ریلوں نے تباہی مچا دی جس کے بعد صوبے میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی۔

تین روز سے جاری مسلسل بارشوں کے بعد سیلابی ریلوں نے مختلف علاقوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ تحصیل درابن ، پروا ، کلاچی ،درہ زندہ میں سینکڑوں مکان سیلاب کی نذر ہوگئے اور رابطہ سڑکیں تباہ ہوگئیں۔ سیلاب سے ڈیرہ اسماعیل خان کا 60 فیصد علاقہ پانی میں ڈوب گیا جس کے نتیجے میں نظام زندگی بری طرح متاثر ہوگیا۔

ڈیرہ اسماعیل خان کے نواحی علاقوں میں سیلاب متاثرین محفوظ مقامات کی طرف نقل مکانی کرنے پر مجبور ہوگئے اور امداد کے منتظر ہیں۔

ادھر سوات بھی سیلاب سے شدید متاثر ہے۔ بحرین مدین میں متعدد مساجد اور مکانات دریا برد ہوگئے۔ مٹہ،سخرہ،لالکو میں رابطہ پل بہہ گئے۔  مینگورہ بائی پاس پر متعدد ہوٹلز ٹوٹ کر پانی کی نذر ہوگئے۔ مینگورہ بائی پاس سڑک زیر آب آنے سے ٹریفک بند ہوگئی۔

صوبائی حکومت نے سیلاب سے متاثرہ سوات اور چارسدہ میں 30 اگست تک ایمرجنسی نافذ کردی اور تعلیمی ادارے بھی 30 اگست تک بند کردیے گئے۔

خوازہ خیلہ کے مقام پر بھی انتہائی اونچے درجے کا سیلاب ہے۔ سیلاب سے بجلی کا نظام درہم برہم ہوگیا۔ مٹہ ،خوازہ خیلہ ، مدین ، شانگلہ میں بجلی کی ترسیلی لائنوں کو نقصان پہنچا اور کئی کھمبے بہہ گئے جس کے نتیجے میں بجلی کی فراہمی منقطع ہوگئی۔ اتروڑ سوات میں تمام رابطہ سڑکیں بند ہوگئیں۔